Running economy on sustainable basis foremost priority, affirms PM Imran

08:46 PM | 10 Oct, 2019
Running economy on sustainable basis foremost priority, affirms PM Imran
Share

ISLAMABAD - Prime Minister Imran Khan Thursday said his government’s foremost priority was to run the economic system on sustainable basis, which would help create job opportunities, enhance investors’ confidence and promote local industry.

He expressed these views while chairing a meeting of the government’s economic team here, during which matters relating to the promotion of Small and Medium Enterprises (SMEs), revival of sick industrial units and incentives to the construction sector were discussed in detail.

Federal ministers Makhdoom Khusro Bakhtiar, Umar Ayub, Hamad Azhar and Muhammadmian Soomro, Advisor on Finance Dr Abdul Hafeez Sheikh, Advisor on Commerce Abdul Razak Dawood, Advisor on Reforms Dr Ishrat Hussain, special assistants Dr Firdous Ashiq Awan, Yusuf Baig Mirza and Shaukat Tareen, Federal Board of Revenue (FBR) Chairman Shabbar Zaidi, Board of Investment (BOI) chairman, National Disaster Management Authority (NDMA) chairman and senior officers attended the meeting.

Prime Minister Imran Khan chairs meeting of the Economic Team. #PrimeMinisterImranKhan وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت معاشی ٹیم کا اسلام آباد میں اجلاس۔ اجلاس میں وفاقی وزراء مخدوم خسرو بختیار ، عمر ایوب، حماد اظہر، محمد میاں سومرو، مشیر خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ، مشیر تجارت عبدالرزاق داود، مشیر اصلاحات ڈاکٹر عشرت حسین، معاونین خصوصی ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان، یوسف بیگ مرزا، شوکت ترین، چیرمین ایف بی آر شبر زیدی، چیرمین سرمایہ کاری بورڈ، چیرمین این ڈی ایم اے اور سینئر افسران بھی موجود۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ہماری اولین ترجیح معاشی نظام کو مستحکم بنیادوں پر چلانا ہے جس کے نتیجے میں روزگار کے مواقع پیدا ہو نگے، سرمایہ کاروں کا اعتماد بڑھے گا اور مقامی صنعتوں کو فروغ ملے گا۔ اجلاس میں چھوٹی اور درمیانی صنعتوں (ایس ایم ایز) کے فروغ، بیمار صنعتوں کی بحالی اور تعمیرات سیکٹر کو مرعات دینے کے حوالے سے تفصیلی گفتگو بیمار صنعتوں کی بحالی کے حوالے سے وزیر اعظم کوآگاہ کیا گیاکہ کل 687 ایسے یونٹس ہیں جن کو فوری طور پر بحال کرنے کے لئےاقدامات کیے جاسکتے ہیں۔ اجلاس کو آگاہ کیا گیا کہ پبلک پرا ئیویٹ پارٹنرشپ کے تحت ان کی بحالی ممکن ہو سکے گی۔ وزیراعظم نے ہدایت جاری کی کہ 60 دن کے اندر ایک مفصل منصوبہ بندی کے تحت ان یونٹس کو بحال کرنے کے لیے جن قوانین اور انتظامی اصلاحات کی ضرورت ہے، ان کو مکمل کیا جائے۔ چھوٹے اور درمیانی صنعتوں کے فروغ کے حوالے سے آگاہ کیا گیا کہ ایس ایم ایز میں اس وقت سرمایہ کاری، جدید ٹیکنالوجی کے استعمال کی کمی، ہنر مند افراد کی کمی ، قوانین میں تبدیلی ، سمیڈا میں اصلاحات، ریسرچ کا فقدان جیسے مسائل کا سامنا ہے ۔ اس ضمن میں وزیرِ اعظم نے کہ پرائیویٹ سیکٹر کو ایس ایم ایز کے فروغ کے لئے شامل کیا جائے۔ کاروببار میں آسانیاں پیدا کی جائیں تاکہ سرمایہ کار کسی دقت یا ہچکچاہٹ کے بغیر سرمایہ کاری کر سکیں۔ مقامی سطح پر چھوٹے صنعتی یونٹس کو ترجیح دی جائے تاکہ روزگار کے مواقع پیدا ہوں۔ وزیرِ اعظم نے ہدایت کی کہ ایک ہفتے میں ایس ایم ایز کے فروغ کے لئے مکمل ایکشن پلان پیش کیا جائے جس میں مختلف ٹارگٹ مکمل کرنے کے لیے مخصوص میعاد کا تعین شامل ہو۔ تعمیرات سیکٹر کے لیے مراعات فراہم کرنے کے حوالے سے بتایا گیا کے اس شعبے سے متعلقہ صنعتوں کو جلد ٹیکس مراعات دے دی جائیں گی۔ سٹیل اور سیمنٹ صنعتوں کے سیلز ٹیکس کے حوالے سے وزیر اعظم نے مشیر خزانہ کو ہدایت کی کہ وہ ایف بی آر، نیا پاکستان ہاوسنگ اتھارٹی اور صوبائی حکومتوں سے مل کر لائحہ عمل ترتیب دیں اور اگلے ہفتے تک رپورٹ پیش کریں۔ وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کے معاشی ٹیم کے ساتھ تواتر کے ساتھ اجلاس منعقد کیے جائیں گے جس کا سب سے اہم مقصد بین الوزارتی ہم آہنگی بڑھانا ہے۔

Posted by Prime Minister's Office on Thursday, October 10, 2019

Regarding the revival of sick industrial units, the prime minister was informed that a total of 687 sick units were in such a state which could immediately be revived through some measures.

The meeting was told that the revival of such units was possible through the public-private partnership.

The prime minister directed that the process of legislation and administrative reforms required for the revival of sick units should be finalized within 60 days under a comprehensive planning.

Regarding the promotion of SMEs, the meeting was apprised of the challenges and problems faced by the SMEs, including investment, lack of modern technology, shortage of skilled manpower, legislative issues, reforms in SMEDA (Small and Medium Enterprises Development Authority) and lack of research.

In this respect, the prime minister said the private sector should be involved in the promotion of SMEs and ease of doing business should be ensured so that investors could invest in that area without any problem and hesitation.

Priority should be given to small industrial units at local level to create job opportunities, he added.

The prime minister directed to present within a week a complete plan of action, including the time-bound targets for the promotion of SMEs.

Regarding the provision of incentives to the construction sector, the meeting was told that the tax incentives would soon be offered to the relevant industries in this sector.

About the sales tax for steel and cement industries, the prime minister directed the Advisor on Finance to finalize a strategy in coordination with the FBR, Naya Pakistan Housing Authority and provincial governments, and present a report in that respect by the next week.

The prime minister stressed for regular meetings with the economic team so that enhanced inter-ministerial coordination was ensured.